قیامِ امام حسین علیہ السلام ایک مکمل مزاحمتی عمل تھا جس کی یاد بھی مزاحمتی ہونی چاہیے۔سید الشہداءؑ نے اپنے موقف و منطق سے اوراپنے رویے سے یزید کے طغیان کو رد کیااور مزاحمت کی ، آپ ؑ کا قیام تاریخ کا منفرد مزاحمتی قیام تھا جس کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔قیامِ سید الشہداؑوہ حماسہ ہے جس میں دلیری، شجاعت اور مردانگی اپنے اوج پر ہے۔ قیامِ سید الشہداؑکے وقت تمام امت اسلامیہ وطبقات ذہنی طور پر یزیدیت کو قبول کرچکے تھے۔بقول اقبال کسی کا بھی دل ذلت قبول نہیں کرتا ذہن مفاد پرست ہے جو ہر ذلت قبول کرلیتا ہے۔ اُسوہِ سید الشہداءو روحِ عزاداری مزاحمت، شجاعت ، دلیری ، بہادری، للکار اور حماسہ ہے۔مومنین امام حسین علیہ السلام کے مدینہ سے عاشورا تک کےخطبات کا مطالعہ کریں جس کا ایک ایک جملہ فقط حماسی و مزاحمتی ہے۔کربلا حماسہ و مزاحمت کا درس دیتا ہے جبکہ اسے بزمی ،رسمی اور ثوابی درس بنادیا گیا۔آج امامِ حسین ؑ ہر اس کام کا ذریعہ بنالیے گئے ہیں جس کے خلاف امامؑ نے مزاحمت کی تھی۔اگر عزائے حسین ؑ کے اندر حسینی روح نہیں ، عزائے کربلا کا کربلا سے ارتباط و تعلق نہیں ، تو یہ فقط کسی علاقے کی ثقافت کا نمونہ و مظہر ہے۔رسمی و بزمی عزا ء حسینی عزاء نہیں بلکہ ثقافتی ہے جبکہ حماسہ روحِ کربلا و رزم کا نام ہے اور عزائے حسینی اسی رزم کا تسلسل ہے۔قیامِ امام حسین علیہ السلام ایک مکمل مزاحمتی عمل تھا جس کی یاد بھی مزاحمتی ہونی چاہیے۔سید الشہداءؑ نے اپنے موقف و منطق سے اوراپنے رویے سے یزید کے طغیان کو رد کیااور مزاحمت کی ، آپ ؑ کا قیام تاریخ کا منفرد مزاحمتی قیام تھا جس کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔قیامِ سید الشہداؑوہ حماسہ ہے جس میں دلیری، شجاعت اور مردانگی اپنے اوج پر ہے۔ قیامِ سید الشہداؑکے وقت تمام امت اسلامیہ وطبقات ذہنی طور پر یزیدیت کو قبول کرچکے تھے۔بقول اقبال کسی کا بھی دل ذلت قبول نہیں کرتا ذہن مفاد پرست ہے جو ہر ذلت قبول کرلیتا ہے۔ اُسوہِ سید الشہداءو روحِ عزاداری مزاحمت، شجاعت ، دلیری ، بہادری، للکار اور حماسہ ہے۔مومنین امام حسین علیہ السلام کے مدینہ سے عاشورا تک کےخطبات کا مطالعہ کریں جس کا ایک ایک جملہ فقط حماسی و مزاحمتی ہے۔کربلا حماسہ و مزاحمت کا درس دیتا ہے جبکہ اسے بزمی ،رسمی اور ثوابی درس بنادیا گیا۔آج امامِ حسین ؑ ہر اس کام کا ذریعہ بنالیے گئے ہیں جس کے خلاف امامؑ نے مزاحمت کی تھی۔اگر عزائے حسین ؑ کے اندر حسینی روح نہیں ، عزائے کربلا کا کربلا سے ارتباط و تعلق نہیں ، تو یہ فقط کسی علاقے کی ثقافت کا نمونہ و مظہر ہے۔رسمی و بزمی عزا ء حسینی عزاء نہیں بلکہ ثقافتی ہے جبکہ حماسہ روحِ کربلا و رزم کا نام ہے اور عزائے حسینی اسی رزم کا تسلسل ہے       
Page # 1   Page # 2   Page # 3   Page # 4